امریکی صدارتی انتخاب: جوبائیڈن وائٹ ہاؤس سے چند قدم کی دوری پر

واشنگٹن: امریکی صدارت کے لیے ڈیموکریٹ امیدوار جو بائیڈن اب وائٹ ہاؤس سےمحض چند قدم کی دوری پر ہیں اور شکست کی صورت میں نتائج نہ تسلیم کرنے کی دھمکی دینے والے امریکی صدر کے لیے دوبارہ صدر بننے کی راہیں مسدود ہوتی جارہی ہیں۔

اب تک کے غیر حتمی نتائج کے مطابق جوبائیڈن 264 الیکٹورل ووٹس حاصل کرنے میں کامیاب ہوچکے جبکہ ری پبلکن پارٹی سے تعلق رکھنے والے ڈونلڈ ٹرمپ 214 الیکٹورل ووٹس کے ساتھ ان سے کہیں پیچھے ہیں۔
امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) کی رپورٹ کے مطابق جو بائیڈن نے سخت مقابلے والی 2 مزید ریاستوں مشی گن اور وِسکونسن میں کامیابی حاصل کر کے ’نیلی دیوار‘ (ڈیموکریٹس کی اکثریت والی ریاستیں) کے اہم حصے کو واپس پا لیا جو 2016 کے انتخاب کے دوران ڈیموکریٹس کے ہاتھوں سے پھسل گئی تھیں۔

امریکی انتخاب کے لیے ووٹنگ کا عمل مکمل ہوئے ایک روز گزرنے کے باوجود اب تک کوئی بھی امیدوار فتح کے لیے درکار 270 ووٹس حاصل نہیں کرپایا تاہم بڑی جھیلوں کے نام سے مشہور ریاستوں میں کامیابی نے انہیں 264 ووٹس دلا دیے اور ممکنہ طور پر وہ اقتدار کا ہما اپنے سر رکھنے کے لیے تیار ہیں۔
جو بائیڈن اب تک 7 کروڑ 20 لاکھ 38 ہزار 30 ووٹس حاصل کر چکے ہیں جو امریکا کی تاریخ میں سب سے زیادہ ہیں جبکہ امریکی صدر کو اب تک 6 کروڑ 85 لاکھ 825 ووٹس مل چکے ہیں۔

جوبائیڈن نے اپنی نائب صدارتی امیدوار کمالا ہیرس کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے متوقع کامیابی کے پیشِ نظر کہا کہ ’میں ایک امریکی صدر کی طرح حکومت کروں گا، جب ہم جیت جائیں گے تو کوئی نیلی یا سرخ (دونوں جماعتوں سے منسوب رنگ) ریاست نہیں ہوگی صرف ریاست ہائے متحدہ امریکا ہوگا‘۔

واضح رہے بہت سی ریاستوں میں ڈاک کے ذریعے آنے والے ووٹس کو انتخابی دن کے 3 روز بعد تک موصول کرنے کی اجازت دے رکھی ہے لیکن اس کے لیے شرط ہے کہ اسے 3 نومبر کو ارسال کیا گیا ہو۔

امریکی صدر کا کہنا تھا کہ یہ ووٹس نہ گنے جائیں تاہم بائیڈن یہ کہتے ہوئے اپنے حامیوں کو صبر کی تلقین کرتے نظر آئے کہ انتخاب ’ابھی ختم نہیں ہوا جب تک ہر ووٹ کا شمار نہ ہوجائے، ہر ووٹ گنا جائے گا‘۔

دوبارہ گنتی کی درخواست
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پارٹی نے سخت مقابلے والی سوئنگ ریاستوں میں پینسلوینا، مشی گن اور جیارجیا میں شکست کے پیشِ نظر قانونی دعوے دائر کردیے۔

اس سے قبل بھی ری پبلکنز کی جانب سے پینسلوینیا اور نیواڈا میں قانونی دعوے دائر کیے گئے تھے جن میں بیلٹس کی گنتی کے مقامات پر ان کے مبصرین کو بہتر رسائی دینے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

دوسری جانب ٹرمپ کی پارٹی نے پینسلوینا کے معاملے میں سپریم کورٹ کی مداخلت حاصل کرنے کی بھی کوشش کررہی ہے جو اس بات سے متعلق ہے کہ کیا ڈاک سے موصول ہونے والے بیلٹس انتخاب کے دن کے 3 روز بعد تک گنے جاسکتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں